This is an automatically generated PDF version of the online resource pakistan.mom-rsf.org/en/ retrieved on 2021/05/06 at 22:13
Reporters Without Borders (RSF) & Freedom Network - all rights reserved, published under Creative Commons Attribution-NoDerivatives 4.0 International License.
Freedom Network LOGO
Reporters without borders

حکومت پاکستان

حکومت پاکستان

نجی شعبے کے ساتھ ساتھ، جسے 2002 اجازت ملی، حکومت پاکستان اب بھی میڈیا کے چند حصوں پر مکمل اختیار رکھتی ہے۔ اگرچہ پاکستان میں حکومتی اخبار نہیں ہے لیکن حکومت ٹیرسٹریل یا زمینی ٹیلیوژن اور اے ایم (ایمپلچوڈ موڈولیشن) فریکوینسی پر مکمل کنٹرول رکھتی ہے۔

پاکستان ٹیلیویژن کارپوریشن (پی ٹی وی سی) حکومتی ملکیتی لیمٹڈ کمپنی جو پاکستان ٹیلیویژن (پی ٹی وی) نیٹ ورک جس میں پی ٹی وی نیوز، پی ٹی وی ہوم، پی ٹی وی سپورٹس، پی ٹی وی ورلڈ، پی ٹی وی گلوبل، پی ٹی وی نیشنل و دیگر چلاتی ہے۔ وفاقی حکومت کا تعینات کردہ دس رکنی بورڈ آف ڈائریکٹرز کارپوریشن کے پالیسی معملات کو دیکھتا ہے۔ وفاقی وزارت اطلاعات و نشریات جو کارپوریشن کے اکثر شیئر رکھتی ہے اس کی روزانہ کی کارکردگی کی نگرانی کرتی ہے۔

پی ٹی وی سی زمینی ٹی وی نشریات میں مکمل کنٹرول رکھتا ہے اور اپنے تمام زمینی نشریات اپنی یا پھر اپنی ذیلی کمپنی شالیمار ریکارڈنگ اینڈ براڈکاسنگ کمپنی (ایس آر بی سی) کے ذریعے کرتا ہے۔ایس وی بی سی میں پی ٹی وی سی سب سے بڑا شراکت دار ہے جس میں 70 فیصد سے زیادہ اس کے حصص ہیں. پی ٹی وی سی نے بین الاقوامی، مقامی اور [ملک]] علاقائی ناظرین کے لئے کئی سیٹلائٹ چینلز چلاتے ہیں.

پاکستان براڈکاسٹنگ کارپوریشن (پی بی سی) ایک قانونیادارہ ہے، جو 1972 میں صدارتی آرڈیننس کے ذریعہ قائم کیا گیا تھا. آرڈیننس بعد میں 1973 میں ایک پارلیمنٹ کے ایکٹ میں تبدیل کیا گیا تھا. پی بیسی نے عوامی پیسہ کے ذریعے فنڈز فراہم کیے ہیں اور ریڈیو پاکستان کی قومی نشریاتی خدمات (این بی ایس) کے ذریعہ ملک میں AM تعدد پر خصوصی کنٹرول ہے. پی بی سی بورڈ آف ڈائریکٹرز کی طرف سے نگرانی کی جاتی ہے، جو وفاقی حکومت کی طرف سے مقرر کیا جاتا ہے. انفارمیشن اینڈ براڈکاسٹنگ کے وفاقی سیکریٹری وزارت بورڈ کے سربراہ کے سربراہ ہیں. اس وقت یہ شخص شفقت جلیلہیں۔

پی بی سی 18 شہروں میں ایف ایم 101 اور اسلام آباد اور کراچی میں 13 شہروں اور ایف ایم 94 میں ایف ایم ریڈیو سٹیشنوں کے نیٹ ورک بھی چلاتاہے۔ پی بی سی ایس ایس بی سی میں تقریبا 20 فیصد حصص کا مالک ہے، جس میں شالیمار ریڈیو ایف ایم 94.6 نیٹ ورک کراچی، حیدرآباد، لاہور، اسلام آباد، فیصل آباد، ملتان اور پشاور چل رہا ہے۔

اگرچہ پاکستان میں الیکٹرانک میڈیا کو منظم کرنے کے لئے - پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) موجود ہے، اس کا پی ٹی ویسی، پی بی سی اور ایس آر بی سیپرکوئی اختیار نہیں ہے. ان تنظیموں کو کسی بھی ٹیلی ویژن چینلیا ریڈیو سٹیشن کو چلانے کے لیے لائسنس کے لیے درخواست دینے کی ضرورت نہیں ہے. اس کے برعکس وہ جتنے چاہیں آؤٹ لیٹس / چینلز / سٹیشنوںچلا سکتے ہیں۔

 

میڈیا کمپنیاں/گروپس
میڈیا آوٹ لٹس
حقائق

کاروبار

ٹیلیویژن براڈکاسنگ

پاکستان ٹیلیویژن کارپوریشن

ریڈیو براڈکاسنگ

پاکستان براڈکاسنگ کارپوریشن

مزید معلومات

معلومات دستیاب ہیں

ملکیت کے بارے میں معلومات عوامی سطح پر دستیاب نہیں ہیں، کمپنی/چینل معلومات دیتا نہیں ہے یا پھر جواب نہیں دیتا ہے، کوئی عوامی سطح پر ریکارڈ دستیاب ہے

1 ♥

میٹا ڈیٹا

معلومات کے حصول کے لیے خط پی بی سی کو 23 جنوری 2019 کو کوریئر اور ای میل کے ذریعے ارسال کیا گیا۔ 15 فروری کو کوریئر کے ذریعےیادہانی کے باوجود کمپنی نے کوئی جواب نہیں دیا۔ آمدن اور منافع سے متعلق معلومات کے حصول کے لیے پی بی سی کو درخواست 19 فروری 2019 کو بھیجی لیکن اپریل 2019 کے آخر تک کوئی جواب نہیں ملا۔ آر ٹی آئی کمیشن کو ایک شکایت 4 مارچ 2019 کو ارسال کی لیکن کوئی جواب اب تک نہیں ملا ہے۔ یہاں دی گئی معلومات پی بی سی کی ویب سائٹ سے لی گئی ہیں تاہم ویب سائٹ پی بی سی کی آمدن اور اخراجات کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کرتی ہے۔
پی بی سی بورڈ ماسوائے چار صوبوں سے مقرر کئے جانے والے معروف شخصیات کے علاوہ سب کے سب سرکاری افسران پر مشتمل ہے۔ حکومت ان افسران کو ایک وزارت/ادارے سے دوسرے منتقل کرنے کا اختیار رکھتی ہے۔ اس لیے ان افسران کو ان کے عہدوں کے ساتھ ذکر کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ چار (غیرسرکاری) معروف شخصیات کے بارے میں بطور بورڈ کے رکن معلومات عام نہیں ہیں۔

  • منصوبہ از
    Logo Freedom Network
  •  
    Reporters without borders
  • فنڈ دیئے
    BMZ